حزب اللہ کے سربراہ سیدحسن نصراللہ نے امت اسلامیہ میں تفرقہ انگیزی کی شازشوں کا مقابلہ کرنے کی ضرورت پر زوردیا ہے

حزب اللہ کے سربراہ سید حسن نصراللہ نے لبنان کی الامہ تحریک کے سکریٹری جنرل  شیخ عبدالناصر الجبری کی یاد میں منعقدہ پروگرام کو خطاب کرتے ہوئے کہا کہ  عالم اسلام کو آج انتہا پسندی جیسے سنگین خطرے کا سامنا ہے - ان کا کہنا تھا کہ ہمیں چاہئے کہ ان قوتوں کا مقابلہ کریں جو امت اسلامیہ میں تفرقہ ڈال رہی ہیں - سید حسن نصراللہ نے کہاکہ تکفیر ایک انتہائی خطرناک لعنت ہے جو امت اسلا میہ میں داخل ہوگئی ہے - انہوں نے برطانیہ کی ایم آئی سکس اور امریکا کی سی آئی اے کے لئے کام کرنےوالے نام نہاد شیعہ اور نام نہاد سنی عناصر کے بارے میں رہبرانقلاب اسلامی آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای کے بیان کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ آج ان دونوں گروہوں کے لئے جو کسی نہ کسی اعتبار سے تکفیر اور خیانت کا ارتکاب کرہے ہیں سبھی سیٹلائٹ چینل کام کررہے ہیں لیکن استقامتی محاذ کے چینلوں کی نشریات کو عرب سیٹ اور نائل سیٹ پر بند کردیا گیا ہے - حزب اللہ کے سربراہ نے کہا کہ یہ کوئی اتفاقی موضوع نہیں ہے بلکہ دنیا کے ملکوں نے اس بات کو سمجھ لیا ہے کہ امت اسلامیہ نے عالمی سامراج کے مقابلے میں مضبوط قدم اٹھایا ہے اور اس کا موقف واضح ہے-  انہوں نے مسئلہ فلسطین کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہاکہ امت اسلامیہ فلسطین سے ہرگز دستبردار نہیں ہوگی اور اس راستے میں وہ کسی بھی قربانی سے  دریغ نہیں کرے گی -

 

Dec ۲۷, ۲۰۱۶ ۱۶:۵۰ UTC
کمنٹس