پاکستان کی سینیٹ کے چیئرمین رضا ربانی نے جنرل راحیل شریف کی جانب سے سعودی فوجی اتحاد کی کمان سنبھالے جانے کی خبروں پر حکومت سے وضاحت طلب کر لی ہے۔

پاکستانی سینیٹ کے چیئرمین رضا ربانی نے حکومت پاکستان سے براہ راست سوال کیا ہے کہ کیا سابق آرمی چیف ریٹائرڈ جنرل راحیل شریف نے سعودی عرب کی سرکردگی میں انتالیس ملکوں کے فوجی اتحاد کے کمانڈر کا عہدہ قبول کرنے سے پہلے حکومت سے اجازت لی تھی؟۔

سینیٹ کے چیئرمین نے پاکستانی وزیر دفاع خواجہ آصف سے ریٹائرافسروں کے تعلق سے قانون کے پیش نظر سوال کیا کہ کیا وفاقی حکومت کو اعتماد میں لیا گیا ہے اور کیا این او سی جاری کیا گیا ہے؟ - پاکستانی میڈیا نے خبر دی ہے کہ توقع ہے کہ حکومت کی طرف سے اس سلسلے میں بدھ کو جواب دیا جائے گا- پاکستانی سینیٹ کے چیئرمین نے جنرل راحیل شریف کے ہاتھوں سعودی فوجی اتحاد کی کمان سنبھالنے پر یہ اعتراض ایک ایسے وقت کیا ہے جب پاکستان کی پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں اس طرح کے کسی بھی اتحاد کا حصہ نہ بننے کا فیصلہ کیا گیا تھا- اگرچہ پاکستانی وزیر دفاع خواجہ آصف کی جانب سے جنرل ریٹائر راحیل شریف کے ذریعے سعودی فوجی اتحاد کی کمان سنبھالے جانے کی خبر سامنے آئی تھی لیکن اس تعلق سے سرکاری طور پر کوئی بیان سامنے نہیں آیا ہے-

Jan ۱۰, ۲۰۱۷ ۱۱:۰۳ UTC
کمنٹس