• امریکی دباؤ مسترد ہندوستان اور روس کے مابین معاہدہ

ہندوستان نے امریکہ کی طرف سے پابندیوں کی پرواہ کئے بغیر جمعے کو روس سے تقریباً چار سو کلو میٹر تک فضا سے فضا میں مار کرنے والے جدید ترین ایر ڈیفنس سسٹم ایس چار سو کی خریداری کے سودے پر دستخط کر دیئے۔

ہندوستان کے دورے پر آئے روس کے صدر ولادیمیر پوتن اور وزیراعظم نریندرمودی کے درمیان جمعے کو ہوئی وفد کی سطح پر مذاکرات میں اس سودے پر دستخط کئے گئے۔ ہندوستان تقریباً چالیس ہزار کروڑ روپے میں فضا سے فضا میں مار کرنے والے ان غیر معمولی میزائیلوں کے پانچ اسکوارڈن خریدے گا۔

میزائیلوں کی سپلائی دو سال کے اندر یعنی دو ہزار بیس تک شروع ہو جائے گی۔ یہ سودا امریکہ کی اس وارننگ کے باوجود کیا گیا ہے جس میں روس سے ہتھیارخریدنے پر اقتصادی پابندی عائد کرنے کی بات کہی گئی ہے۔ ہندوستان نے وزیردفاع اوروزیر خارجہ کی سطح پرامریکہ سے پہلے ہی واضح کردیا ہے کہ وہ روس سے ایس چار سو میزائل کے سودے سے پیچھے نہیں ہٹے گا۔اس نے کہا ہے کہ روس کے ساتھ اس کے دہائیوں پرانے دفاعی تعلقات ہیں اور اس سے طویل عرصے سے دفاعی ساز وسامان خرید رہا ہے۔

امریکہ نے کہا تھا کہ وہ ہندوستان پر کاٹسا کے تحت اقتصادی پابندی عائد کرسکتا ہے۔ اس قانون میں التزام ہے کہ اگر کوئی بھی ملک روس، ایران یا شمالی کوریا سے ہتھیاروں کی خریداری کرتا ہے تو اسے امریکی پابندیوں کا سامنا کرنا پڑے گا۔

ذرائع کے مطابق ہندوستان کے یہ سودا کر کے امریکہ کو یہ پیغام بھی دیا ہے کہ وہ اسٹریٹیجک معاملات میں کسی کے دباؤ میں آنے والا نہیں ہے۔ روس امریکی پابندیوں کی مخالفت میں یہ میزائل صرف ہندوستان ہی نہیں بلکہ چند دیگرملکوں کو بھی فروخت کرنے کے بارے میں بات کررہاہے۔ ان میں ترکی بھی شامل ہے جبکہ چین اس میزائل کو پہلے ہی خرید چکا ہے۔

ٹیگس

Oct ۰۵, ۲۰۱۸ ۱۸:۴۴ Asia/Tehran
کمنٹس