Sep ۰۷, ۲۰۱۹ ۰۹:۲۵ Asia/Tehran
  • چندریان2 چاند کے قریب پہنچ کر بھی دور رہ گیا

چاند کی سطح سے دو کلومیٹر کے فاصلے تک پہنچ کر چاند پر ہندوستان کے دوسرے مشن چندریان -2 کا زمین پر واقع مشن کنٹرول پینل سے رابطہ ٹوٹ گیا۔

انڈین اسپیس ریسرچ انڈین اسپیس ریسرچ آرگنائزیشن (اسرو) نے آج بروزہفتہ  بتایا کہ چندریان -2 کے لینڈر وکرم کے چاند پر اترنے سے متعلق پہلے سے طے منصوبے کے مطابق چل رہا تھا اور چاند کی سطح سے محض 2.1 کلومیٹر تک اس کا ڈسپلے چل رہا تھا۔ لیکن اس کے بعد زمین پر واقع مرکز سے لینڈر کا رابطہ ٹوٹ گیا۔

اسرو کا کہنا ہے کہ رابطہ ٹوٹنے سے پہلے تک ’وکرم‘ سے ملے اعداد و شمار کا تجزیہ کیا جا رہا ہے۔

لینڈر کا مشن کنٹرول پینل سے رابطہ ٹوٹتے ہی وہاں موجود اسرو کے صدر ڈاکٹر کے شون اور دیگر سائنسدانوں کو مایوسی ہوئی اس موقع پر اس ملک کے وزیراعظم نریندر مودی بھی وہاں موجود تھے۔ انہوں نے کچھ دیر بعد سائنسدانوں کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے کہا کہ انہیں مایوس ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسرو کے سائنسدانوں نے اس مشن میں جتنا کچھ حاصل کیا ہے وہ قابل تعریف ہے اور ملک کو ان پر فخر ہے۔

چندریان -2 کا پروجیکشن کا آغاز  22 جولائی کو آندھرا پردیش کے شری هرکوٹا واقع ستیش دھون اسپیس سینٹر سے کیا گیا تھا۔ 14 اگست تک زمین کے مدار میں رہنے کے بعد چاند کی طرف اس کا سفر شروع ہوا تھا اور چھ دن بعد 20 اگست کو وہ چاند کے مدار میں پہنچا تھا۔ چندریان -2 کے تین حصے’ آربیٹر‘، ’لینڈر‘ اور ’روور‘ میں سے آربیٹر اب بھی چاند کے مدار میں چکر لگا رہا ہے جبکہ طے پروگرام کے مطابق لینڈر وکرم اور اس کے اندر واقع روور ’پرگیان‘ کو آج ڈیڑھ سے ڈھائی بجے کے درمیان چاند کی سطح پر اتارا جانا تھا۔

ٹیگس

کمنٹس