• یورپی ممالک کا ایٹمی معاہدہ جاری رکھنے پر اتفاق

اسلامی جمہوریہ ایران، یورپی یونین، فرانس، برطانیہ اور جرمنی نے ایٹمی معاہدے کو جاری رکھنے پر زوردیا ہے۔

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیرخارجہ محمد جواد ظریف، یورپی یونین کے شعبہ خارجہ پالیسی کی سربراہ فیڈریگا موگرینی نیز فرانس، جرمنی اور برطانیہ کے وزرائے خارجہ نے بریسلز اجلاس میں اس بات پر زوردیا ہے کہ ایٹمی معاہدے کو جاری رکھا جائےگا۔
اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیرخارجہ نے بریسلز اجلاس میں سبھی فریقوں خاص طور پر یورپی ملکوں کی جانب سے ایٹمی معاہدے پر عمل درآمد کی اہمیت پر زور دیا۔
اجلاس کے بعد وزیرخارجہ جواد ظریف نے اپنے ٹویٹر پیج پر بھی لکھا کہ ایٹمی معاہدے کو کمزور کرنے والے کسی اقدام کو قبول نہیں کیا جائےگا۔ انہوں نے اپنے پیغام میں کہا کہ ایران اور یورپی ملکوں کے اجلاس کا آ‏ج اسی بات پر اتفاق تھا۔ انہوں نے کہا کہ ایران کے عوام کو یہ پورا حق پہنچتا ہے کہ ایٹمی معاہدے کے فوائد سے استفادہ کریں اور اس معاہدے کو کمزور کرنے والی کسی بھی کوشش کو قبول نہیں کیا جائےگا۔
بریسلز اجلاس میں یورپی یونین کے شعبہ خارجہ پالیسی کی سربراہ فیڈریکا موگرینی، فرانس کے وزیرخارجہ لودریان، جرمن وزیرخارجہ زگمار گبریل اور برطانوی وزیرخارجہ بورس جانسن نے بھی کہا کہ ایٹمی معاہدہ شاندار سفارتکاری کا غیر معمولی نتیجہ ہے اور اس کی حفاظت کی جائےگی۔
فیڈریکا موگرینی نے کہا کہ یورپی یونین ایٹمی معاہدے کو باقی رکھنے میں پرعزم ہے۔انہوں نے کہاکہ آئی اے ای اے نے اپنی نو رپورٹوں میں اس بات کی تصدیق کی ہے کہ ایران نے ایٹمی معاہدے پر عمل کیا ہے اور ایران کا ایٹمی پروگرام پوری طرح پرامن مقاصد کے لئے ہے اور یورپی یونین ایٹمی معاہدے کے مشترکہ ورکنگ گروپ میں بھی اس بات کا اعلان کرتی ہے۔ یورپی یونین کے شعبہ خارجہ پالیسی کی سربراہ نے اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ ایٹمی معاہدہ ایک بین الاقومی اور کثیرفریقی معاہدہ ہے جو علاقے اور یورپ کی سلامتی کے لئے ضروری ہے کہا کہ یورپی یونین اس معاہدے کو جو بین الاقوامی سطح کا انتہائی اہم معاہدہ باقی رکھے گی۔
ان کا کہنا تھا کہ یورپی یونین ایک ایسے معاہدے کے تحفظ کی خواہاں ہے جو مفید ہے اور جس نے دنیا کو زیادہ پرامن بنایا ہے اور ہم سبھی فریقوں سے یہ کہنا چـاہتے ہیں کہ اس پر پوری طرح سے عمل کریں۔
برطانوی وزیرخارجہ نے بھی کہا کہ ایٹمی معاہدے کا کوئی متبادل نہیں ہوسکتا۔
انہوں نے بریسلز میں ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں کہا کہ ایران نے ایٹمی معاہدے پر عمل کیا ہے اور آئی اے ای اے نے بھی اس کی تصدیق کی ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ یہ بہت ہی اہم معاہدہ ہے اور اس معاہدے کے حق میں پوری دنیا کو متحدہ کرنا ہوگا انہوں نے کہا کہ یورپی ممالک ایران کے ساتھ ہوئے اس معاہدے کو خاص اہمیت دیتے ہیں۔

Jan ۱۱, ۲۰۱۸ ۱۶:۰۰ UTC
کمنٹس