Mar ۲۲, ۲۰۱۹ ۱۹:۳۴ Asia/Tehran
  • عراق: کشتی پلٹنے کے واقعے میں 207 افراد جاں بحق و لاپتہ ہوئے

عراق کے صوبے نینوا کے ڈپٹی گورنر نے کہا ہے کہ دریائے دجلہ میں کشتی ڈوبنے کے بعد سے اب تک نواسی لاشیں نکالی جا چکی ہیں جبکہ ایک سو اٹھارہ افراد ابھی لاپتہ ہیں۔

العالم کی رپورٹ کے مطابق صوبے نینوا کے ڈپٹی گورنر احمد الجبوری نے کہا ہے کہ ڈوبنے والی کشتی پر صرف پچاس افراد کے سوار ہونے کی گنجائش تھی جبکہ اس کشتی پر دو سو ستّاسی افراد سوار تھے جن میں بیشتر عورتیں اور بچے شامل تھے۔

انھوں نے کہا کہ سیاحتی جزیرے میں لگے کیمروں سے پتہ چلتا ہے کہ اس کشتی میں ایک سو تین عورتیں، اٹھانوے بچے اور چھیاسی مرد سوار تھے۔

کشتی ڈوبنے سے ہونے والے بڑے جانی نقصان پر عراق کے وزیر اعظم نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے تین روز کے عام سوگ کا اعلان کیا ہے۔

ایران کے دفتر خارجہ کے ترجمان بہرام قاسمی نے بھی دریائے دجلہ میں سیاحتی کشتی غرق ہونے کے سانحے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے حادثے کے شکار افراد کے اہل خانہ، عراق کی حکومت اور قوم کو تعزیت پیش کی ہے۔

ٹیگس

کمنٹس