اقوام متحدہ کے نمائندے نے کہا ہے کہ مشرق وسطی میں دنیا بھر کے ہزاروں دہشت گرد، دہشت گردانہ سرگرمیوں میں ملوث ہیں۔

 مشرق وسطی کے امن کے عمل میں اقوام متحدہ کے خصوصی کوارڈی نیٹر نیکولائے ملادینوف نے کہا ہے کہ گذشتہ برسوں میں دنیا بھر سے تیس ہزار سے زیادہ جنگجو، مشرق وسطی میں پہنچ کر دہشت گرد گروہوں میں شامل ہوئے ہیں-

نیکولائے ملادینوف نے کہا کہ مشرق وسطی کے وسیع علاقے میں بڑی تعداد میں غیرمقامی و بیرونی دہشت گردوں کی موجودگی اور ان کے حامیوں کی جانب سے انھیں بھاری تعداد میں ہتھیاروں اور دوسرے وسائل کی فراہمی، علاقائی اور عالمی امن و استحکام کے لئے خطرے میں اضافے کا باعث بنی ہے-

مشرق وسطی میں اقوام متحدہ کے کوارڈی نیٹر نے مشرق وسطی کے بارے میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس میں کہا کہ بعض بیرونی دہشت گرد اپنے ملکوں میں واپس چلے گئے ہیں اور اپنے معاشرے میں تشدد پھیلنے کا باعث بنے ہیں-

امریکی اور یورپی حکومتیں کہ جو داعش سمیت دیگر دہشت گرد گروہوں کو جنم دینے اور انھیں ہتھیار اور مالی مدد فراہم کرنے میں اہم کردار کی حامل رہی ہیں اب ان ہی دہشت گردوں کی صفوں میں اپنے جوانوں کی موجودگی کی مشکل سے دوچار ہیں-

ان دہشت گردوں کی یورپ میں اپنے گھروں میں واپسی نے مغربی ممالک کے دارالحکومتوں کو شدید تشویش میں مبتلا کر دیا ہے یہاں تک کہ فرانس سمیت بعض ممالک نے دو ہزار سترہ کے لئے اپنے دفاعی و سیکورٹی بجٹ میں کافی اضافہ کر دیا ہے-

 

Apr ۲۱, ۲۰۱۷ ۱۱:۰۲ UTC
کمنٹس