Aug ۰۵, ۲۰۱۹ ۰۶:۵۷ Asia/Tehran
  • دشمن اسلامی ممالک کے درمیان افراتفری پھیلانے کے درپے

ایرانی عدلیہ کے سربراہ نے افغان سینٹ کی قیادت میں ایک وفد کے دورہ ایران کا خیر مقدم کرتے ہوئے دونوں ممالک کے درمیان مختلف شعبوں میں باہمی تعلقات کے فروغ پر زور دیا۔

ایرانی عدلیہ کے سربراہ نے ایران میں 20 لاکھ سے زائد افغان پناہ گزینوں کو ایران کے گرانقدر مہمان قرار دیتے ہوئے کہا کہ مناسب صورتحال کی فراہمی کی صورت میں ہم ایران میں قید افغان مجرموں کو ان کے وطن واپس بھیجنے کے لئے تیار ہیں۔

سید ابراہیم رئیسی نے ایران کے دورے پر آئے ہوئے افغان سینٹ کے چیئر مین فضل ہادی مسلم یار کے ساتھ ملاقات میں کہا کہ یقینا ایران اور افغانستان کے درمیان وفود کا تبادلہ، باہمی تعلقات میں مزید مضبوطی لانے میں مددگار ثابت ہوگا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایک ایسے وقت جب دشمن عناصر نے ملک کے عوام کے درمیان سمیت اسلامی ممالک کے درمیان افراتفری پھیلانے کے خواہاں ہیں افغانستان کے سارے گروہوں کے درمیان وحدت اور یکجہتی کے فروغ اور ایران اور افغانستان کے تعاون میں مزید اضافہ کرنا، انتہائی ضروری ہے۔

سید ابراہیم رئیسی نے مزید کہا کہ افغان عوام کے پاس غیر ملکی فوجوں بشمول سابق سویت یونین اور امریکہ کیخلاف مزاحمت کرنے کا ایک بہت روشن کارنامہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ افغان قوم ایک باعزت اور قابل فخر قوم ہے اور حالیہ دنوں میں بھی افغانستان میں قیام امن و استحکام اور خودمختاری کے لئے عوام کی رائے اور ان کی خواست پر بھروسے کرنا، افغان حکومت کے لئے انتہائی ضروری اور بنیادی ہے۔

ٹیگس

کمنٹس