Mar ۰۹, ۲۰۱۹ ۱۹:۱۰ Asia/Tehran

۳ رجب سنہ ۲۵۴ ہجری کو فرزند رسول حضرت امام علی نقی علیہ السلام کی شہادت واقع ہوئی۔ سحر عالمی نیٹ ورک کی جانب سےآپ تمام محبان اہلبیت ع کی خدمت میں تعزیت اور تسلیت عرض ہے

جہاد اور مقاومت کی زندگی

"امام نقیؑ کی زندگی مقاومت اور جہاد سے بھرپور ایک زندگی ہے۔  جوانی میں شہادت، پوری عمر کا جہاد، بغیر کسی شرط کے خدا کی راہ میں جدوجہد، مشکلات سے نہ گھبرانا، طاقتور اور اُن کی طاقت سے نہ ڈرنا، خدا کی راہ میں وقار اور اطمینان سے حرکت، خدا کی بندگی اور اُس کے سامنے خشوع و خضوع اِس معصوم امامؑ کی زندگی کی اہم خصوصیات  میں سے ہیں۔"

ولی امرالمسلمین حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای (حفظہ اللہ)
8 مئی 1981

ما اخذ کتاب : 250 سالہ انسان

آپ ”نقی“ اور ”ہادی“ کے لقب سے مشہور تھے۔

-آپ علیہ السلام کے والد گرامی کا نام حضرت امام محمد تقی علیہ السلام اور والدہ ماجدہ کا نام سمانہ مغربیہ ہے

امام علی النقی علیہ سلام ذیقعدہ سن 220 ہجری ، جب انکے والد گرامی" نویں امام" شھید کۓ گۓ میراث امامت کے اعتبار سے آپ امامت کے منصب پر فائز ہوۓ،

شایان ذکر ہے کہ جب امام ہادی(ع) امامت کے منصب پر فائز ہوۓ توآنحضرت کی عمر 8 سال 5 مہینے سے زیادہ نہ تھی،آپ(ع) اپنے والد کے مانند بچپن میں ہی امامت کےعظیم الھی منصب پر فائز ہوۓ،

حضرت امام علی النقی علیہ سلام کا دور امامت،6 عباسی خلیفوں( معتصم ، واثق، متوکل ،منتصر ،مستعین ، اور معتز کے ھمعصر تھا۔

امام علی النقی علیہ سلام کے ساتھ ان خلیفوں کا سلوک مختلف تھا  البتہ سب کے سب خلافت کو غصب کرنے اور امامت کو چھیننے میں متفق اور ہم عقیدہ تھے،جن میں سے متوکل عباسی (دسواں عباسی خلیفہ)اھل بیت اور خاندان امامت و علوی کے نسبت سب سے زیادہ دشمنی رکھنے میں نامدار تھا اور ھر طریقے سے انکو آزار و اذیت پہچانے میں کوئی کسر باقی نہیں چھوڑی ، حد تو یہ تھی کہ آ‏ئمہ ہدی کی ہر یاد گار کو مٹانا چاہتا تھا، اماموں کی قبروں کو خراب کیا ، خاص کر قبر مطہر سید الشھدا حضرت امام حسین علیہ سلام اور اس کے اطراف کے تمام گھروں کو ویران کرنے اور وہاں کھیتی باڑی کرنے کا حکم  دیا۔ 

آپ کی کچھ زندگی معتصم کے زمانہ میں گذری اور یہی وہ زمانہ تھا جس میں ”سرمن رائے“ تشکیل پائی۔

اس کے بعد واثق کا زمانہ آیا یہ وہ زمانہ تھا جس میں امام علیہ السلام اور خلیفہ کے درمیان اچھے تعلقات رہے ہیں۔

اس کے بعد متوکل کا زمانہ آیا لیکن یہ وہ زمانہ تھا جس میں اھل بیت (ع) سے علی الاعلان دشمنی اورمقابلہ کیا جانے لگا اور لوگوں کو ان سے منحرف کیا جانے لگا۔

اور جب مدینہ میں متوکل کے والی کو امام علیہ السلام کی شان وشوکت کو دیکھ کر اپنی حکومت کے ڈگمگانے کا خوف لاحق ہوا تو اس نے متوکل کو خط لکھ کر آگاہ کیا کہ امام علیہ السلام تیری حکومت کے خلاف انقلاب لانا چاہتے متوکل نے امام علیہ السلام کو خط لکھ کر سرمن رائے بلایا تاکہ آپ اورآپ کے اھل بیت وہاں پر رہیں اور لوگوں کارجحان آپ کی طرف سے ہٹ جائے ۔ 

چنانچہ امام علیہ السلام نے ان حالات کو دیکھ کر سفر کا ارادہ کرلیا اور سرمن رائے جانے کے لئے رختِ سفر باندھ لیا اور جب امام علیہ السلام متوکل کے تیار کردہ مکان میں پہونچے، چند روز رہنے کے بعد آپ نے اس کا مکان چھوڑ دیا اور اپنے مال سے ایک مکان خریدا تاکہ خلیفہ کے مہمان بن کر نہ رہیں ، یہی وہ مکان تھا جس میں آپ کو دفن بھی کیا گیا، جو آج بھی لاکھوں افراد کی زیات گاہ ہے۔

امام علیہ السلام نے مجبوراً سرمن رائے میں قیام فرمایا، یہاں تک کہ آپ کی شہادت واقع ہوئی کیونکہ ہمیشہ آپ کے خلاف سازش ہوتی رہی اورآپ کو ہر طرح کی اذیت دی جانے لگی، اس جرم میں کہ یہ ہماری حکومت کے خلاف انقلاب لانا چاہتے تھے اور ہماری حکومت کے خلاف بغاوت کرنا چاہتے تھے۔

ان تمام حالات کے بعد بھی خلیفہ کو جب بھی کوئی شرعی مشکل پیش آتی تھی تو وہ امام علیہ السلام کے پاس آکر پناہ لیتا تھا کیونکہ خلیفہ میں مسائل شرعی سمجھنے کی صلاحیت نہ تھی اور نہ ھی وہ شرعی سوالات کا جواب دے سکتا تھا۔

متوکل نے امام کو سن 243 ھجری میں مدینہ منورہ سے نکلوا کر سامرا نقل مکانی کروائی اسطرح آنحضرت کو اپنے آبائی وطن سے دور کیا۔

حضرت امام علی النقی علیہ سلام کو سامرا " عباسیوں کے دار الخلافہ" میں 11 سال ایک فوجی چھاونی میں جلا وطنی کی حالت میں رکھا گیا اور اس دوران مکمل طور پر اپنے دوستوں کے ساتھ ملاقات کرنے سے محروم رکھا گیا۔ آخر کار 3 رجب اور دوسری روایت کے مطابق 25 جمادی الثانی سن 254 ھجری میں معتز عباسی کی خلافت کے دور میں خلیفہ کے بھائی معتمد عباسی کے ہاتھوں زہر دے کر شھید کیا گیا،

شھادت کے وقت امام علیہ سلام کے سر ھانے انکے فرزند حضرت امام حسن عسکری علیہ سلام کے سوا کوئي نہ تھا،

اس وقت آنحضرت کا مرقد مطھر شھر سامرا میں ہے جہاں آپ (ع) کے جوار میں آپکے فرزند حضرت امام حسن عسکری علیہ سلام ، انکی بہن حکیمہ خاتون امام جواد علیہ سلام کی بیٹی اور امام زمانہ عجل اللہ تعالی فرجہ شریف کی والدہ ماجدہ نرگس خاتون دفن ہیں،

 

امام ہادی (ع) کی ہدایات

1- قالَ الإمامُ علی بن محمد النقی الهادی: الدُّنْیا سُوقٌ رَبحَ فیها قَوْمٌ وَخَسِرَ آخَرُونَ. 

دنیا اُس بازار کی مانند ہے جس میں کچھ لوگ (آخرت کے لئے) فائدہ اٹھاتے ہیں اور کچھ لوگ نقصان اٹھاتے ہیں۔

[أعیان الشّیعة: ج 2، ص 39]

 

2- قالَ(علیه السلام): الْغَضَبُ عَلى مَنْ لا تَمْلِكُ عَجْزٌ، وَعَلى مَنْ تَمْلِكُ لُؤْمٌ. 

اس شخص پر غصہ کرنا جس پر تم قدرت نہیں رکھتے،عجز و ناتوانی ہے اور جس شخص پر تم قدرت رکھتے ہو،اس پر غصہ کرنا نفس کی پستی کی علامت ہے۔

[مستدرك الوسائل: ج 12، ص 11، ح 13376]

 

3- قالَ(علیه السلام): مَنْ اَطاعَ الْخالِقَ لَمْ یُبالِ بِسَخَطِ الْمَخْلُوقینَ. 

جو شخص خالق کا مطیع و فرمانبردار ہوتا ہے وہ مخلوقات کی ناراضگی کی پرواہ نہیں کرتا۔

[بحارالا نوار: ج 50، ص 177، ح 56]

 

4-قالَ(علیه السلام): مَن کَانَ عَلی بَیِّنةٍ مِن رَبِّهِ هَانَت عَلیهِ مَصائِبُ الدُّنیا وَلَو قرضَ ونشرَ.

جو شخص راہ خدا پر استوار رہتا ہے،اس پر دنیا کے مصائب آسان ہو جاتے ہیں،چاہے اسے ٹکڑے ٹکڑے ہی کیوں نہ کر دیا جائے۔

 [تحف العقول، ص 511]

 

5- قالَ(علیه السلام): العُقُوقُ یُعَقِّب القِلَّة ویُؤدِّی إِلی الذِّلَّة.

والدین کی ناراضگی نعمتوں کی قلت اور ذلت و رسوائی کا سبب بنتی ہے۔

 [مسند الامام الهادی ، ص 303]

 

6- قالَ(علیه السلام): إنَّ اللهَ جَعَلَ اَلدُّنیا دارَ بَلوی وَالآخِرَةَ دارَ عُقبی وَجَعَلَ بَلوَی الدُّنیا لِثَوابِ الآخِرَةِ سَبَباً، وَثَوابَ الآخِرَةِ مِن بَلوَی الدُّنیا عِوَضاً.

خداوند عالم نے دنیا کو آفتوں اور مصیبتوں کا مرکز قرار دیا ہے جبکہ آخرت کو ایک ابدی منزل بنایا ہے۔اسی طرح دنیوی بلا و مصیبت کو اخروی ثواب کا ذریعہ  قرار دیا ہے اور آخرت کا ثواب در حقیقت دنیا کی بلا و مصیبت کا نتیجہ ہوتا ہے۔

 [اعلام الدین، ص 512]

 

7- قالَ(علیه السلام): مَن کانَت لَهُ اِلَی اللهِ حاجَةٌ فَلیَزُر قَبرَ جَدِّیَ الرِّضا(علیه السلام) بِطوُسٍ وَهُوَ عَلی غُسلٍ وَلیُصَلِّ عِندَ رَأسِهِ رَکعَتَینِ وَلیَسئَلِ اللهَ حاجَتَهُ فی قُنوُتِهِ فَاِنَّهُ یَستَجیبُ لَهُ ما لَم یَسئَل مَأثَماً أو قَطیعَةَ رَحِمٍ.

جو شخص خدا سے کسی حاجت کا طلبگار ہو،اسے چاہئے کہ غسل کرنے کے بعد وہ سرزمین طوس میں میرے جد بزرگوار (امام ) رضا (علیہ السلام) کی قبر پر جائے اور بالائے سر دو رکعت نماز ادا کرے اور نماز کے قنوت میں اپنی حاجت خدا سے طلب کرے۔اس طرح اسکی حاجت پوری ہو جائے گی۔مگر یہ کہ وہ خدا سے کسی گناہ یا قطع رحم کا طلبگار ہو۔

 [وسائل الشیعه، ج14، ص 569]

 

8۔قالَ(علیه السلام): اَلحَسَدُ ما حِقُ الحَسَناتِ وَالزَّهوُ جالِبُ المَقتِ. 

حسد نیکیوں کو تباہ کر دیتا ہے اور جھوٹ دشمنی کا سبب بنتا ہے۔ 

[بحارالانوار، ج69، ص 200]

 

9- قالَ(علیه السلام): ألنّاسُ فِی الدُّنیا بِالأَموالِ وَفی الآخِرَةِ بِالأَعمالِ.

لوگ دنیا میں اپنے اموال اور آخرت میں اپنے اعمال کے ساتھ ہیں۔

 [بحارالانوار، ج78، ص 368]

 

10- قالَ(علیه السلام): مَن هانَت عَلَیهِ نَفسُهُ فَلا تَأمَن شَرَّه. 

جس شخص کی اپنی نظر میں کوئی قدر و قیمت نہ ہو،اسکے شر سے کبھی مطمئن مت ہونا۔

[میزان الحکمة، ج3، ص 44]

 

ٹیگس

کمنٹس