Feb ۰۱, ۲۰۱۹ ۱۹:۵۷ Asia/Tehran
  • امریکا میں انسانی حقوق نام کی کوئی چیز نہیں ہے، مرضیہ ہاشمی

ایران کے پرس ٹی وی چینٹل کی اینکر اور صحافی مرضیہ ہاشمی نے امریکی پولیس کی حراست سے رہائی کے بعد ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ امریکا میں انسانی حقوق نام کی کوئی چیز نہیں ہے۔

پریس ٹی وی کی اینکر مرضیہ ہاشمی نے جو امریکی جیل سے رہا ہونے کے بعد بدھ کی رات تہران پہنچی ہیں ایران کے ٹیلی ویژن چینل افق سے اپنے انٹرویو میں بتایا کہ وہ دس روز تک امریکا کی جیل میں قید تنہائی میں رہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ امریکا میں سیاسی قیدی پچاس پچاس برسوں تک جیل میں بند رہتے ہیں۔
مرضیہ ہاشمی کا کہنا تھا کہ قیدیوں کے ساتھ امریکی پولیس کا رویّہ نامناسب ہوتا ہے۔  انہوں نے اپنی رہائی کے لئے ایرانی عوام کی جانب سے کی جانے والی کوششوں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ امریکی پولیس نے انہیں صرف اس لئے گرفتار کیا تھا کہ وہ انقلابی نظریہ رکھتی ہیں اوراس کی حمایت کرتی ہیں۔
واضح رہے کہ امریکی فیڈرل پولیس ایف بی آئی نے پرس ٹی وی کی اینکر اور ڈاکیومینٹری فلم ڈائریکٹر مرضیہ ہاشمی کو تیرہ جنوری کو سینٹ لوئیس ہوائی اڈے پر اس وقت گرفتار کرلیا تھا کہ جب وہ اپنے علیل بھائی اور دیگر رشتہ داروں سے ملاقات کے لئے امریکا پہنچی تھیں۔
امریکی پولیس نے دس روز تک انہیں غیر قانونی طور پر قید تنہائی میں رکھنے کے بعد کوئی جرم بتائے بغیر رہا کردیا۔
رضیہ ہاشمی بدھ کی رات جب واپس تہران پہنچیں تو ایران کے عوام نے ان کا تہران کے امام خمینی بین الاقوامی ہوائی اڈے پر شاندار استقبال کیا۔

ٹیگس

کمنٹس