Feb ۱۸, ۲۰۲۰ ۲۲:۰۷ Asia/Tehran
  • میں صدارتی انتخابات میں کامیاب ہوا ہوں : عبدالله عبدالله

افغانستان کےچیف ایگزیکٹیو عبداللہ عبداللہ نے 28 ستمبر کو ہونے والے صدارتی انتخابات کے نتائج کو مسترد کرتے ہوئے اپنی کامیابی کا اعلان کیا۔

ہمارے نمائندے کی رپورٹ کے مطابق عبداللہ عبداللہ نے آج اپنے حامیوں اور انتخابی مہم کے کارکنوں کے درمیان اشرف غنی پر انتخابات میں دھاندلی کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ اسے انتخابی نتائج کسی بھی طور قبول نہیں ہیں۔

اس سے قبل عبداللہ عبداللہ کے انتخابی دفتر نے اعلان کیا تھا کہ وہ  الیکشن کمیشن کے اعلان کردہ نتائج کو تسلیم نہیں کرتا ہے - عبداللہ عبداللہ کے انتخابی دفتر کے ترجمان فریدون خزون نے کہا کہ انتخابی نتائج کے اعلان کے بعد کی ہر طرح کی صورتحال کی ذمہ داری الیکشن کمیشن پر عائد ہوگی - عبداللہ عبداللہ کی انتخابی مہم کے دفتر کے ترجمان نے کہا کہ ہماری انتخابی ٹیم انتخابی عمل سے پوری طرح الگ ہو رہی ہے اور اس کی وجہ یہ ہےکہ الیکشن کمیشن نے اپنی قانونی حیثیت کھودی ہے ۔

واضح رہے کہ افغانستان کی چیف الیکشن کمشنر حوا علم نورستانی نے آج منگل کو کابل میں ایک پریس کانفرنس میں اعلان کیا کہ محمد اشرف غنی پچاس اعشاریہ چوالیس فیصد ووٹ حاصل کرکے صدارتی انتخابات میں کامیاب قرار پائے ہیں - جبکہ عبداللہ عبداللہ نےانتالیس اعشاریہ باون فیصد ووٹ حاصل کئے۔

یاد رہے کہ افغانستان کے صدارتی انتخابات گذشتہ برس اٹھائیس ستمبر کو ہوئے تھے - افغانستان کے صدارتی انتخابات میں اصل مقابلہ موجودہ صدر اشرف غنی اور چیف ایگزیکٹیو عبداللہ عبداللہ کے درمیان ہوا تھا -

ٹیگس

کمنٹس