Sep ۱۶, ۲۰۲۰ ۰۹:۴۱ Asia/Tehran
  • عراق میں امریکی دہشتگرد پھر نشانے پر آئے

عراق کے صوبہ بابل میں منگل کی شب امریکی دہشتگردوں کے راستے میں سڑک کے کنارے نصب بم اس وقت زور دار دھماکے سے پھٹ گیا جب ان کا کارروان وہاں سے گزر رہا تھا۔

ارنا کی رپورٹ کے مطابق خبری ذرائع کا کہنا ہے کہ امریکہ کے  فوجی کانوائے کے راستے میں دھماکہ بابل ہائی وے پر ہوا۔

اس سے قبل عراق کے دارالحکومت بغداد کے گرین زون میں امریکی سفارت خانے کے فوجی مرکز پر پیر کی شب کئی راکٹ داغے گئے تھے جبکہ اس حملے سے  چند گھنٹے قبل صوبہ قادسیہ اور بابل میں ہی امریکہ کے دو فوجی کانوائے کے راستوں میں دھماکے بھی ہوئے تھے۔

ابھی تک ان حملوں میں جانی نقصان کے حوالے سے کوئی رپورٹ سامنے نہیں آئی ہے۔

چند روز قبل بھی التاجی اور البلد کے امریکی فوجی اڈوں کے قریب راکٹوں سے حملہ ہوا تھا۔

عراقی عوام اور سیاسی اور مذہبی جماعتیں ملک سے امریکی فوجیوں کے انخلا کا مطالبہ کر رہی ہیں جبکہ عراق کی پارلیمنٹ نے بھی اس ملک سے امریکی دہشت گرد فوجیوں کے انخلا کا بل اکثریتی رائے سے منطور کیا ہے۔

واضح رہے کہ 3 جنوری کو امریکی دہشت گردوں نے فضائی حملہ کر کے جنرل قاسم سلیمانی، ابو مہدی المہندس اور ان کے کئی دیگر ساتھیوں کو شہید کر دیا تھا جس کے بدلے میں ایران نے 8 جنوری کو عراق میں امریکی دہشت گردی کے اہم اڈے عین الاسد پر ایک درجن میزائل داغ دئے۔ ایران کے اس جوابی حملے میں امریکہ کو بڑے پیمانے پر جانی اور مالی نقصان اٹھانا پڑا تھا۔

ٹیگس

کمنٹس